Masarrat
Masarrat Urdu

ْقومی شہریت ترمیمی قانون دستورِ ہند اور قومی سلامتی کے خلاف۔ ڈاکٹر خالد مبشر

Thumb

 

کشن گنج، 11جنوری (مسرت نیوز) قومی شہریت تر میمی قانون، این آر سی اور این پی آر خلاف ہونے والے مظاہرے سے خطاب کرتے ہوئے مقررین نے کہا کہ سی اے اے، این آرسی اور این پی آر صرف مسلمانوں کے خلاف نہیں ہیں بلکہ یہ دستورِ ہند اور قومی سلامتی کے دشمن قوانین ہیں۔ 
ڈاکٹر خالد مبشر نے کہاکہ ان قوانین سے ملک میں خانہ جنگی کا ماحول پید ہو رہا ہے۔ ان کالے قوانین نے فسطائیت اور فرقہ پرستی کو ہوا دی ہے۔ اس سے ملک کی سیکولرزم اور جمہویت خطرے میں پڑ گئی ہے۔ ان قوانین کی زد میں آ کر اقلیتوں، دلتوں اور غریبوں کے حقوق کا استحصال ہوگا۔
سیمانچل ہونے والے مسلسل مظاہروں کی ایک کڑی ہے۔ اب پنچایت کی سطح سے لیکر بلاک، ضلع اور کمشنری سطح کے مظاہرے ہورہے ہیں۔ 


میں ڈاکٹر خالد مبشر کی قیادت میں کالے قانون کے خلاف عوامی سیلاب امڈ آیا، جس میں ٹیڑھا گاچھ اور بہادر گنج کے پانچ پنچایت کے تمام گاؤں، ٹولوں اور محلوں سے عوامی احتجاجی جلوس نے بیگنا مدرسہ سے لے کر چنبیلی چوک کے راستے بینا باڑی ہاٹ ہوتے ہوئے روپنی ہاٹ کی طرف سے خانقاہ صوفیہ بیگنا تک تقریباً دس کلو میٹر پرامن پیدل مارچ کیا۔ مظاہرین کا جوش و ولولہ دیکھنے لائق تھا۔ سب کے ہاتھ میں پلے کارڈ، ترنگا اور بینر تھا اور دور تک فضا آزادی کے نعروں سے گونج رہی تھی۔ اس مظاہرے کو ماسٹر ظہیر انور، صوفی محمد اسلم، جے پرکاش گری، شوکت عالم، ماسٹر سجاد حسین آرزو، مکھیا منصور عالم،مکھیا ابو سعید، امام مذکر، نوشاد عالم، دانش رہبر، گلبن، ماسٹر عامر عدنان، ماسٹر نقیب جاوید اختر، رابض عالم، محمد اسجد، انجینئر نجیب ساگر، مہیندر سنگھ اور جمنا پرساد سنگھ سمیت درجنوں سماجی خادموں نے کامیاب بنانے میں تن من دھن کی قربانی دی۔احتجاجی جلوس میں بیگنا، نئی بستی، پرانی بستی، دامو ٹولہ، بوساکھ ٹولی، اسرو ٹولہ، بانسباڑی ٹولہ، گوالٹولی، بانکمیانپور، بیل گچھی، کولبھٹہ، دھادھر، مہوا، پچھم بستی، بیل باڑی، نشندرہ، مالی ٹولہ، نہال بھاگ ٹنگٹنگی، مسلڈنگہ، روپنی، ستی گھٹہ، ڈاکو پورہ، لوچا اور چندرگاؤں سے تقریباً دس ہزار افراد شریک ہوئے۔مظاہرے کا اختتام ڈاکٹر خالد مبشر کے اظہارِ تشکر کے بعد قومی گیت جن گن من پر ہوا۔

 

Ads