Masarrat
Masarrat Urdu

اسرائیلی فوج نے غزہ میں مصنوعی ذہانت سے چلنے والی کچھ فوجی ٹیکنالوجی تعینات کی

  • 11 Feb 2024
  • ظفر اقبال
  • دنیا
Thumb

تل ابیب، 11 فروری (مسرت ڈاٹ کام) اسرائیل کی فوج غزہ میں پہلی بار جنگ میں مصنوعی ذہانت سے چلنے والی کچھ فوجی ٹیکنالوجی تعینات کی ہے جس سے جدید جنگ میں خود مختار ہتھیاروں کے استعمال کے خدشات بڑھ گئے ہیں۔

العربیہ کےمطابق فوج نے اشارہ دیا ہے کہ نئی ٹیک کس کے لیے استعمال کی جا رہی ہے کیونکہ ترجمان ڈینیئل ہگاری نے گذشتہ ماہ کہا تھا کہ اسرائیل کی افواج "ایک ساتھ زمین پر اور زیرِ زمین" کام کر رہی تھیں۔
ایک سینئر دفاعی اہلکار نے اے ایف پی کو بتایا کہ یہ ٹیکنالوجی دشمن کے ڈرون کو تباہ اور غزہ میں حماس کے وسیع سرنگ نیٹ ورک کی نقشہ سازی کر رہی تھی۔
نئی دفاعی ٹیکنالوجیز بشمول مصنوعی ذہانت سے چلنے والی گن سائیٹس اور روبوٹک ڈرونز نے اسرائیل کی ٹیک انڈسٹری کے لیے بصورتِ دیگر سنگین دور میں ایک روشن مقام بنایا ہے۔
2022 میں اس شعبے کا جی ڈی پی میں 18 فیصد حصہ تھا لیکن غزہ میں جنگ نے تباہی مچا دی ہے اور اندازے کے مطابق آٹھ فیصد افرادی قوت کو لڑائی کے لیے بلایا گیا ہے۔
ایک اسرائیلی ٹیک انکیوبیٹر اسٹارٹ اپ نیشن سینٹرل کے چیف ایگزیکٹیو ایوی ہاسن نے کہا، "عمومی طور پر غزہ میں جنگ خطرات تو پیش کرتی ہے لیکن میدان میں ابھرتی ہوئی ٹیکنالوجیز کو جانچنے کے مواقع بھی فراہم کرتی ہے۔""میدانِ جنگ میں اور ہسپتالوں دونوں میں ایسی ٹیکنالوجیز ہیں جو اس جنگ میں استعمال کی گئی ہیں جو ماضی میں استعمال نہیں ہوئیں۔"لیکن ہیومن رائٹس واچ کی ہتھیاروں کی ماہر میری ویرہم نے اے ایف پی کو بتایا، شہریوں کی بڑھتی ہوئی ہلاکتوں سے ظاہر ہوتا ہے کہ دفاعی ٹیکنالوجی کی نئی شکلوں کے استعمال کی بہت زیادہ نگرانی کی ضرورت ہے۔
انہوں نے کہا، "اب ہم موت اور مصائب کی بدترین ممکنہ صورتِ حال کا سامنا کر رہے ہیں جو ہم آج دیکھ رہے ہیں - اس میں سے کچھ نئی ٹیک کے ذریعہ سامنے آئے ہیں۔"
دسمبر میں 150 سے زیادہ ممالک نے اقوامِ متحدہ کی ایک قرارداد کی حمایت کی جس میں نئی فوجی ٹیکنالوجی میں "سنگین چیلنجوں اور خدشات" بشمول "ہتھیاروں کے نظام میں مصنوعی ذہانت اور خود مختاری" کی نشاندہی کی گئی تھی۔
بہت سے دوسرے جدید تنازعات کی طرح جنگ کی بھی سستے بغیر پائلٹ کے فضائی گاڑیوں کے پھیلاؤ سے تشکیل دی گئی ہے جنہیں ڈرون بھی کہا جاتا ہے جس نے فضائی حملوں کو آسان اور سستا بنا دیا ہے۔
حماس نے انہیں 7 اکتوبر کو دھماکہ خیز مواد گرانے کے لیے استعمال کیا جب کہ اسرائیل نے انہیں مار گرانے کے لیے نئی ٹیکنالوجی کا رخ کیا ہے۔
سب سے پہلے فوج نے اسرائیلی اسٹارٹ اپ سمارٹ شوٹر کی تیار کردہ مصنوعی ذہانت سے چلنے والی ایک فعال بصارت کا استعمال کیا ہے جو رائفلوں اور مشین گنوں جیسے ہتھیاروں سے منسلک ہے۔
سینئر دفاعی اہلکار نے کہا، "اس سے ہمارے فوجیوں کو ڈرون کو روکنے میں مدد ملتی ہے کیونکہ حماس بہت زیادہ ڈرون استعمال کرتی ہے۔"
"یہ ہر باقاعدہ فوجی - حتیٰ کہ ایک نابینا سپاہی کو بھی - ایک سنائپر بنا دیتا ہے۔"
ڈرون کو بے اثر کرنے کے لیے ایک اور نظام میں ایک دوستانہ ڈرون کو جال کے ساتھ تعینات کرنا شامل ہے جسے یہ دشمن کے ہتھیار کے گرد پھینک کر اسے بے اثر کر سکتا ہے۔
اہلکار نے کہا، "یہ ڈرون بمقابلہ ڈرون ہے-- ہم اسے اینگری برڈز کہتے ہیں۔"
وزیرِ اعظم بنجمن نیتن یاہو کے حماس کو "تباہ" کرنے کے عزم کا ایک ستون تیزی سے زیرِ زمین سرنگ کے نیٹ ورک کا نقشہ بنا رہا ہے جہاں اسرائیل کے مطابق اس گروپ کے مزاحمت کار چھپے ہوئے ہیں اور یرغمالیوں کو رکھا ہوا ہے۔
یہ نیٹ ورک اتنا وسیع ہے کہ فوج نے اسے "غزہ میٹرو" کا نام دیا ہے اور امریکی فوجی اکیڈمی ویسٹ پوائنٹ کی ایک حالیہ تحقیق میں کہا گیا ہے کہ 500 کلومیٹر (310 میل) سے زیادہ رقبے پر پھیلی ہوئی 1,300 سرنگیں ہیں۔
سرنگوں کی نقشہ سازی کے لیے فوج نے ڈرونز کا رخ کیا ہے جو مصنوعی ذہانت کا استعمال کرتے ہوئے انسانوں کا پتہ لگانا سیکھتے ہیں اور زیرِ زمین کام کر سکتے ہیں جن میں اسرائیل کے اسٹارٹ اپ روبوٹیکن کا بنایا ہوا ہتھیار شامل ہے جو ایک ڈرون کو روبوٹک کیس کے اندر گھیرے ہوئے ہے۔
سینئر اسرائیلی دفاعی اہلکار نے کہا کہ اسے غزہ میں "سرنگوں میں داخل ہونے اور جہاں تک مواصلات اجازت دیتا ہے، دیکھنے کے لیے استعمال کیا جا رہا ہے۔"
اہلکار نے مزید کہا کہ جنگ سے پہلے ٹیکنالوجی نے ڈرونز کو زیرِ زمین کام کرنے کی اجازت نہیں دی تھی کیونکہ سطح پر تصاویر بھیجنے کے مسائل تھے۔
اس تنازعہ نے انسانی حقوق کے خدشات پیدا کیے ہیں لیکن ساتھ ہی جدید ترین دفاعی نظام کے دنیا کے سرکردہ تیارکنندہ کی حیثیت سے اسرائیل کا مقام بھی مستحکم کر دیا ہے۔
وال اسٹریٹ جرنل نے گذشتہ مہینے رپورٹ کیا تھا کہ اسرائیل کا اہم بین الاقوامی اتحادی اور ہر سال اربوں ڈالر کی فوجی امداد فراہم کرنے والا امریکہ خود اپنے فوجیوں کو اسمارٹ شوٹر کی آپٹک سائٹس کا استعمال کرتے ہوئے ڈرون مار گرانے کی تربیت دے رہا تھا۔
جنوری کے اواخر میں اردن میں ایک فوجی مرکز پر ڈرون حملے میں تین امریکی فوجی مارے گئے تھے۔

Ads