Masarrat
Masarrat Urdu

اردو کی لزومیت ختم کرنازبان کے تئیں عطا کردہ قانون کی بھی خلاف ورزی: شہاب الدین احمد

Thumb

 

نئی دہلی، 24ستمبر (مسرت نیوز) بہار میں اردو کی لزومیت ختم کرکے اختیاری بنانے کے محکمہ تعلیم کے اقدام پر سخت نکتہ چینی کرتے ہوئے مشہور ادبی تنظیم بزم صدف انٹرنیشنل کے چیرمین شہاب الدین احمد نے کہاکہ محکمہ کا یہ قدم نہ صرف اردو کے ساتھ ناانصافی ہے بلکہ زبان کے تئیں عطا کردہ قانون کی بھی خلاف ورزی ہے۔
انہوں نے کہاکہ بہار کی بڑی آباد ی اردو پڑھنا لکھنا جانتی ہے اور اپنے بچوں کو بھی اردو پڑھانا چاہتی ہے صرف سرکاری اسکولوں میں ہی نہیں بلکہ غیر سرکاری اسکولوں میں اردو کے استاذ رکھے جاتے ہیں تاکہ مسلم بچوں کوطرف راغب کیا جاسکے اور مسلم بچے غیر سرکاری اسکولوں میں داخلہ اسی وقت لیتے ہیں جب انہیں معلوم ہوتا ہے کہ یہاں اردو کی پڑھائی کا مناسب انتظام ہے۔انہوں نے کہاکہ اس سے بہار میں اردو کی اہمیت کا اندازہ لگایا جاسکتا ہے۔
انہوں نے کہاکہ بہار میں اردو دوسری سرکاری زبان ہے۔ اس حیثیت سے اردو کی لازمیت ختم کرنا انصافی ہوگی۔ نئی تعلیمی پالیسی میں بھی مادری زبان میں پڑھانے پر زور دیا گیا ہے اور بہار میں مسلمانوں کی مادری زبان اردو ہے۔ انہوں نے کہاکہ  محکمہ تعلیم کے دو نوٹی فیکشن سے اردو کی لازمی حیثیت ختم ہورہی ہے جب کہ دیگر زبانوں پر کوئی اثر نہیں پڑ رہا ہے جب کہ دیگر زبانوں کے اردو کے مقابلے میں کم بولنے والے ہیں۔ 
انہوں نے کہاکہ محکمہ تعلیم کے ذریعہ جاری کردہ نوٹیفیکیشن 799کے ذریعہ مادری زبان کی حیثیت سے بہار کے سکنڈری وہائر سکنڈری اسکولوں میں اردو کی لازمیت کو ختم کردینے کے بعد  28/ اگست کو ہی محکمہ تعلیم نے اسی ضمن میں ایک اور نوٹیفیکیشن 1155جاری کیا  جس میں اردو کی لازمیت برقرار رکھنے کی کوئی بات نہیں کی گئی البتہ اردو کی تعلیم کے لئے اسکولوں میں 40 بچوں کی قید لگادی گئی سے۔اس کا سیدھا سا مطلب ہے کہ اگر 39بچے اردو والے ہوں گے تو انہیں اردو نہیں پڑھایا جائے گا۔ 
انہوں نے کہاکہ نئے معیار کے مطابق  (5+1)کے مطابق چھ میں سے پانچ سبجیکٹس میں اساتذہ کی بحالی میں طلباء کی گنتی کی کوئی قید نہیں ہے،لیکن بہار کی دوسری سرکاری زبان اور مادری زبان اردو کے سلسلے میں اساتذہ کی بحالی کے لئے پہلے دس طلباء کی شرط لگانا اور اب چالیس طلباء کے ساتھ مشروط کر نا اردو کے ساتھ کھلی نا انصافی اور اس کو ختم کرنے کی سازش ہے۔انہوں نے کہاکہ اس سلسلے میں بہار کے وزیر اعلی اور وزیر تعلیم کو خط بھی لکھیں گے۔
واضح رہے کہ 15/ مئی 2020 ء سے قبل تک مادری زبان کے طور پر اردو کی حیثیت ایک لازمی مضمون کی تھی۔لیکن اب افسرشاہوں نے حکومت بہار کی منظوری کے بغیر اردو کو دوسری زبان کے خانے میں ڈال کر اردو کو ختم کرنے کی سازش کی ہے۔ لہٰذا ہم لوگوں کا حکومتِ بہار سے مطالبہ کرتے ہیں کہ  15/ مئی 2020سے پہلے اردو زبان کی جو پوزیشن تھی اسے بحال کیا جائے۔

Ads